Reiki for health care and well-being, Reiki training classes in Urdu and English, Reiki Master/Teacher Muhammad Akram Khan in Lahore, Pakistan

ریکی اور حقیقی علاج

ہم سب کے دو جسم ہوتے ہیں، ایک مادّی اور دوسرا غیر مادّی جسے بہت سے لوگ روحانی جسم بھی کہتے ہیں۔ روح، ذہن اور قوتِ حیات وغیرہ اسی غیر مادّی جسم کا حصہ ہوتے ہیں۔ جب ہم کوئی بھی کام کرتے ہیں تو اسے دونوں اجسام میں سے کسی ایک کے حوالے سے جسمانی یا ذہنی مشقت کہتے ہیں لیکن اگر ذرا سا بھی غور کیا جائے تو یہ بات آسانی سے سمجھ آتی ہے کہ انسان کی کارکردگی میں دراصل دونوں جسم بیک وقت کام کر رہے ہوتے ہیں۔ خواہ لکھنے پڑھنے کا کام ہو یا بھاگنے دوڑنے کا یا کوئی اور، کوئی ایک جسم بھی اکیلا کام نہیں کر سکتا۔ جس طرح مادّی جسم کو روحانی جسم کی ضرورت ہوتی ہے، اسی طرح روحانی جسم بھی مادّی جسم کے بغیر کام نہیں کر سکتا۔ چونکہ دونوں اجسام کو اکٹھے کام کرنا ہوتا ہے۔ لہٰذا دونوں کا صحت مند ہونا ضروری ہوتا ہے۔

بیماری کی صورت میں ہم عموماً مادّی جسم کا علاج کرتے ہیں لیکن غیر مادّی جسم کو بالکل نظرانداز کر دیتے ہیں۔ ویسے بھی مادّی دوائیاں عموماً مادّی جسم پر ہی اثرانداز ہوتی ہیں۔ جونہی ہم مادّی جسم کو تندرست محسوس کرتے ہیں، ہم اسے ہی کافی سمجھ کر مطمئن ہو جاتے ہیں لیکن یہ حقیقی علاج نہیں ہے۔ ایک جسم کا علاج کرنے اور دوسرے کو نظرانداز کر دینے سے دونوں میں عدم توازن پیدا ہوتا ہے جو مجموعی کارکردگی میں زوال کا باعث بنتا ہے۔ لہٰذا بہتر یہ ہوتا ہے کہ دونوں کا علاج بیک وقت کیا جائے۔ ایسا مادّی ادویات سے نہیں کیا جا سکتا لیکن ریکی سے کیا جا سکتا ہے کیونکہ ریکی نہ صرف مادّی جسم کا علاج کرتی ہے بلکہ غیر مادّی جسم کی ضروریات بھی پوری کرتی ہے اور دونوں میں قدرتی توازن قائم کرتی ہے۔ ریکی بنیادی سطح پر کام کرتے ہوئے نہ صرف مادّی جسم کے ہر خلیئے تک پہنچتی ہے بلکہ غیر مادّی جسم کی تمام سطحوں پر بھی کام کرتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ریکی کو حقیقی علاج کے لئے مثالی طریقے کا درجہ دیا جاتا ہے۔

اگر آپ کو یہ مضمون پسند آئے تو دوستوں کے ساتھ شیئر کیجئے